Type Here to Get Search Results !

Jitni bhi hui usse mulaqat ganeemat | Mohsin Naqvi

Views 0

Also Read

Mohsin Naqvi All Shero Shayari Ghazal Collection | Mohsin Naqvi Ghazals | Mohsin Naqvi Urdu Ghazals

ہونٹوں سے پھسلتی ہوئی ہر بات غنیمت

جتنی بھی ہوئی اُس سے مُلاقات غنیمت


تنہائی بھی جس دور میں تنہا نہیں ملتی

اس عالم اے ہنگام میں یہ ذات غنیمت


ہر چار قدم دور نئی گات لگی ہے

جتنا بھی پھیریں شہر میں محتاط غنیمت


اس بندا اے گستاخ سے اب دل نہ لگانہ 

گزری ہے جو نہ قدری اے جذبات غنیمت


قسمت میں لکھا تھا جو بہر حال ہوا ہے

جیسے بھی ہیں اب یارب حالات غنیمت


اُس کو جو نبہانہ ہے نبھاتہ چلا جائے 

ہم کو تو یہی چار قدم ساتھ غنیمت


اب ہم کو صدا اُجالوں کی تمنا نہیں محسن

آئے جو حصے میں تو اِک رات غنیمت


محسن نقوی 

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad