Type Here to Get Search Results !

Saya e zulf siyah faam kahan tak pahunche |Qateel Shifai

Views 0

Also Read

Saya e zulf siyah faam kahan tak pahunche |Qateel Shifai

سایۂ زلف سیہ فام کہاں تک پہنچے
جانے یہ سلسلۂ شام کہاں تک پہنچے

دور افق پار سہی پا تو لیا ہے تجھ کو
دیکھ ہم لے کے ترا نام کہاں تک پہنچے

یہ سسکتی ہوئی راتیں یہ بلکتے منظر
ہم بھی اے سایۂ گلفام کہاں تک پہنچے

نہ کہیں سایۂ گل ہے نہ کہیں ذکر حبیب
اور اب گردش ایام کہاں تک پہنچے

ہم تو رسوا تھے مگر ان کی نظر بھی نہ بچی
ہم پہ آئے ہوئے الزام کہاں تک پہنچے

مطمئن گرمیٔ احساس جفا سے بھی نہیں
دل کو پہنچے بھی تو آرام کہاں تک پہنچے

ان کی آنکھوں کو دیئے تھے جو مری آنکھوں نے
کس سے پوچھوں کہ وہ پیغام کہاں تک پہنچے


قتیل شفائی

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad