Type Here to Get Search Results !

Sarwar kahoon ke malik o maula kahoon tujhe tazmeen lyrics

Views 0

یہ بھی پڑھیں

 Sarwar kahoon ke malik o maula kahoon tujhe tazmeen lyrics

تخلیقِ کائنات کا منشا کہوں تجھے
مسند نشین عرشِ معلی کہوں تجھے
بی آمنہ کے نور نظر کیا کہوں تجھے

سَرور کہوں کہ مالک و مَولیٰ کہوں تجھے
باغِ خلیل کا گُلِ زیبا کہوں تجھے


شمش الضحیٰ کہوں تجھے بدر الدجیٰ کہوں
صدر العلی کہوں تجھے کہف الورٰی کہوں
خیر الورٰی کہوں تجھے نور الہدیٰ کہوں

گلزارِ قُدس کا گُلِ رنگیں ادا کہوں
درمانِ دردِ بلبلِ شیدا کہوں تجھے


رخ پر تجلیات کی ہوتی ہیں بارشیں
دیتی ہیں ضو جبین مقدس کی رونقیں
کس آنکھ میں نہیں ہے زیارت کی حسرتیں

اللہ رے تیرے جسمِ منوّر کی تابشیں
اے جانِ جاں میں جانِ تجلّا کہوں تجھے


تیری ثنا کو فکر کا عنواں کروں شہا
شاداب اپنا گلشنِ ایماں کروں شہا
پھر اپنی مغفرت کا میں ارماں کروں شہا

مجرم ہوں اپنے عفو کا ساماں کروں شہا
یعنی شفیع روزِ جزا کا کہوں تجھے


عربی میں نعت پاکاجو حسان نے لکھی
اس کے ہر ایک شعر میں ندرت ہے واقعی
اُردو میں اس کلام کی تشریح کی گئی

تیرے تو وصف عیبِ تناہی سے ہیں بَری
حیراں ہوں میرے شاہ میں کیا کیا کہوں تجھے


سب کو مزاج الفتِ خیر البشر دیا
دریائے فن کو گوہرِ مدحت سے بھر دیا
آبادئ سخن کو معانی کا گھر دیا

لیکن رضؔا نے ختمِ سخن اس پہ کر دیا
خالق کا بندہ خلق کا آقا کہوں تجھے


تضمین نگار:- شاعرِ اسلام مولانا محبوب گوہر اسلام پوری صاحب
✰✰✰

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad