Type Here to Get Search Results !

Bakare khwaish hairanam Tazmeen Lyrics

Views 0

یہ بھی پڑھیں

 Bakare khwaish hairanam Tazmeen Lyrics

ہے سر پہ چھایا ابرِ غم اغثنی یا رسول اللہ
گِھرے ہیں مشکلوں میں ہم اغثنی یا رسول اللہ
یہی حالات ہیں پیہم اغثنی یا رسول اللہ

بکار خویش حیرانم اغثنی یا رسول اللہ
پریشانم پریشانم اغثنی یا رسول اللہ


فقیرِ بے نوا در چھوڑ کر تیرا کہاں جائے
کسے آواز دے دست طلب کس در پہ پھیلائے
مرے آقا تمہیں تو مالکِ کونین کہلائے

ندارم جز تو ملجائے ندانم جز تو ماوائے
توئی خود سازو سا مانم اغثنی یا رسول اللہ


شفا کے واسطے خاکِ حرم اس نے لیا ہے چن
جگر کے زخم کو مرہم کی اب رہتی نہیں ہے دھن
مگر بے جان نہ کر دے مجھے یہ معصیت کا گھن

شہا بیکس نوازی کن طبیبا چارہ سازی کن
مریض دردِ عصیانم اغثنی یا رسول اللہ


اے پیارے آمنہ کے لال اے محبوبِ ربانی
ترے در کی غلامی میں ہے پوشیدہ جہانبانی
غلامی کا یہ رشتہ ہے سبھی رشتوں سے لاثانی

اگر رانی وگر خوانی غلامم انت سُلطانی
دگر چیزے نمیدانم اغثنی یا رسول اللہ


ہے امیدِ کرم مجھ کو تجھی سے رحمتِ یزداں
خدا کے واسطے کر دو مری بھی مشکلیں آساں
منور کر دو دل کو اے عرب کے نیر تاباں

گدائے آمد اے سلطان بامید کرم نالاں
تہی داماں مگر دانم اغثنی یا رسول اللہ


تجھی سے اکتسابِ نور کرتے ہیں مہ و اختر
سلامی پیش کرتے ہیں ملک شام وسحر در پر
تری مدحت نگاری کیا کرے یہ خامۂ گوہر

رضؔایت سائل بے پر توئی سلطان لَاتَنْہَرْ
شہا بہرے ازیں خوانم اغثنی یا رسول اللہ


تضمین نگار:- شاعرِ اسلام مولانا محبوب گوہر اسلام پوری صاحب
✰✰✰

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad