Type Here to Get Search Results !

Kharab hal kiya dil ko pur malal kiya Tazmeen Lyrics

Views 0

یہ بھی پڑھیں

 Kharab hal kiya dil ko pur malal kiya Tazmeen Lyrics

فراقِ شہرِ مدینہ نے کیسا حال کیا
کہ سکون سے جینا بھی ہے محال کیا
عجب ہوں میں کہ نہ اپنا بھی کچھ خیال کیا

خراب حال کیا دِل کو پُر ملال کیا
تمہارے کوچے سے رخصت کیا نہال کیا


میں ان کے کوچے میں ہر زاویے سے تھا سالم
پلٹ کے آنا یہاں پر مرا تھا کب لازم
خدا ہی جانے کہ کب تک بنوں گا پھر عازم

یہ کب کی مجھ سے عداوت تھی تجھ کو اے ظالم
چھڑا کے سنگِ درِ پاک سر و بال کیا


کہیں گلاب کہیں حسن لالہ و سنبل
کہاں کے باغ میں اب مل سکے گا ایسا گل
مرے لئے تو یہی باغ ہے جہانِ کل

چمن سے پھینک دیا آشیانۂ بلبل
اُجاڑا خانۂ بے کس بڑا کمال کیا


نہ میں نے زور سے دامن کو اپنے جھاڑا تھا
نہ فرط جذب میں اپنا گریباں پھاڑا تھا
تیری زمیں کا نہ اک سبزہ تک اکھاڑا تھا

تِرا ستم زدہ آنکھوں نے کیا بگاڑا تھا
یہ کیا سمائی کہ دُور ان سے وہ جمال کیا


مجھے جدائی کا نقش کہن مٹانا تھا
خوشی کو لانا تھا رنج و محن مٹانا تھا
فراقِ طیبہ کا درد و چبھن مٹانا تھا

حضور اُن کے خیالِ وطن مٹانا تھا
ہم آپ مٹ گئے اچھا فراغِ بال کیا


رکھی ہے آبرو کونین کے مسیحا نے
سند غلامی کی دے دی ہے شاہ بطحا نے
ملے یہ مژدہ اے گوہر کہ میرے آقا نے

الٰہی سن لے رضاؔ جیتے جی کہ مَولیٰ نے
سگانِ کوچہ میں چہرہ مِرا بحال کیا


تضمین نگار:- شاعرِ اسلام مولانا محبوب گوہر اسلام پوری صاحب
✰✰✰

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad