Type Here to Get Search Results !

Ishara Mustafa ka Pa chuka hai | Nadeem Raza Faizi

Views 0

Also Read

Ishara Mustafa ka Pa chuka hai Lyrics

اشارہ مصطفٰی کا پا چکا ہے
وہ دیکھو شمس واپس آ چکا ہے

حجابِ رخ نبی نے یوں اٹھایا
فلک کا چاند بھی شرما چکا ہے

کہیں شبیر کا نعرہ لگا کیا
یزیدِ وقت کیوں گھبرا چکا ہے

حسینوں کی طرف دیکھے وہ کیسے
نبی کا حُسن جس کو بھا چکا ہے

بچانے کے لیے مسلک رضا کا
مجاہد جیل جا کر آ چکا ہے

رضا کے شیر سے لیتا ہے پنگا
اے شیخِ نجد تو پگلا چکا ہے

مجاہد دے دو جیلر کو معافی
لگا کر تالا وہ پچتا چکا ہے

اسے بولوں گا میں سچا حبیبی
جسے عشقِ نبی تڑپا چکا ہے

حسین ابنِ علی کا ایک سجدہ
کروڑوں سجدوں کو چمکا چکا ہے

تم اس شیشے کو اصغر بول دینا
جو شیشہ سنگ سے ٹکرا چکا ہے

اسے فیضی دعائیں دیں گے خواجہ
نبی کا دین جو پھیلا چکا ہے

ندیم رضا فیضؔی

Post a Comment

0 Comments

Top Post Ad

Below Post Ad